کہنے کو فقط ایک بات باقی ہے

Poet: عدیلہ چوہدری
By: Adeela Chaudry, Renalakhurd

کہنے کو فقط ایک بات باقی ہے
خوش ہوں میری جاں کہ رات باقی ہے

لذت دیدار سے مدہوش ہوئے رہتے ہیں
ہوش آئے تو سوچیں کہ حیات باقی ہے

اک ہی شعر پہ دو جام نین مجھے دان کیے
ذرا صبر جاناں! ابھی کلیات باقی ہے

ترے میخانے میں سنی گئی میری عرض تشنہ لبی
کب اس دور میں ورنہ وہ پہلے سی بات باقی ہے

جل اٹھا تیرے نام پہ من میں اک دیا سا
تیرا لمس جو لایا طوفان جزبات باقی ہے

میں تو تم ہوں میری جاں تم میں ہی تو ہو
تیری ذات سے جڑی ہاں میری ذات باقی ہے

Rate it:
08 Aug, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Adeela Chaudry
I am sincere to all...!.. View More
Visit 24 Other Poetries by Adeela Chaudry »

Reviews & Comments

Very nice ghazal. Keep it up. 👌

By: Mohid, Lahore on Sep, 05 2019

میں تو تم ہوں میری جاں تم میں ہی تو ہو

OMG this is amazing. Beautiful words ever.

By: Ahmer, Lahore on Aug, 21 2019

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City