جارہا ہے کوئی خفا ہو کر

Poet: م الف ارشیؔ
By: Muhammad Arshad Qureshi, Karachi

ہِجر میں تیرے مبتلا ہو کر
ہم تو مرجائیں گے جدا ہو کر

بس تعلق بھی اس نے یوں توڑا
جیسے پنچھی اڑا رہا ہو کر

اس نے محسوس بھی نہ ہونے دیا
"جارہا ہے کوئی خفا ہو کر "

ہم کو آیا نہیں منانے کوئی
ہم نے دیکھا ہے یہ خفا ہو کر

جس کی فطرت میں دشمنی ہوگی
دھوکہ دے گا وہ آشنا ہو کر

یہ جو جھک کر سلام کرتا ہے
سب سے ملتا ہے پارسا ہو کر

اس سے پوچھو ذرا وفا کیا ہے
گر پڑے گا یہ آئینہ ہو کر
 

Rate it:
16 Aug, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Muhammad Arshad Qureshi
My name is Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) belong to Karachi Pakistan I am
Freelance Journalist, Columnist, Blogger and Poet.​President of Internati
.. View More
Visit 184 Other Poetries by Muhammad Arshad Qureshi »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City