"زینتِ زیست"

Poet: Muqadas Majeed
By: Muqadas Majeed, Kasur

قریب ہے کہ ملک الموت
یہاں ہم میں اتر آئے
لیکر گشت اس بازار کا
جا کہے وہ خالق سے
کہ جس دن کا تو کہتا تھا
وہ دن نہ اب دُود ہے
جو پہلے سے ہی مردہ ہوں
مجھے ان سے کیا مقصود ہے

قریب ہے کہ فسانوں سے وہ
حقیقی کردار باغی ہو جائیں
مخاطب آج کی ہیروں رانجھوں سے
وہ چیخ کر یہ کہہ اٹھیں
کہ اے ہوس کے مارو، تم نے تو
ہم کو بھی بدنام کیا

قریب ہے کہ تیز ہوا
زندگی کے اوراق یوں پلٹ جائے
کہ بابِ اوّل میں زینتِ زیست تھے جو
آخر میں اُن کا نشاں نہ ہو

Rate it:
22 Aug, 2019

More Life Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Muqadas Majeed
Visit 9 Other Poetries by Muqadas Majeed »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City