ادھوری خواہش

Poet: Hannad
By: Hannad Qureshi, Multan

تمہیں بنے اس کا دلدار ہی رہنا تھا
ہو کے پابند اک جان کے سوگوار ہی رہنا تھا

وقت کا کیا قصؤر تھا اس نے تو گزرنا تھا
کیا تمام زندگی موسم بہار ہی رہنا تھا

جو لمحے گزر گئے کبھی ماضی بن ہی نہ سکے
اس ماضی کو سر پہ لٹکی تلوار ہی رہنا تھا

قفس سے رہائی بعد میں سوچتا ہوں
مجھے تیری محبت میں گرفتار ہی رہنا تھا

لیکن کیا ہوتا حاصل تب بھی مجھ کو جبکہ
تجھے ہر دم میری چاہتوں سے فرار ہی رہنا تھا

کہاں تک کرے کوئی دل جوئی میری آخر
کہ قرار میں بھی مجھے بے قرار ہی رہنا تھا

اب مر گیا ہے اب سکون میں ہو گا حناد
ورنہ جیتے جی اس نے غم خؤار ہی رہنا تھا

Rate it:
08 Sep, 2019

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Hannad Qureshi
Visit Other Poetries by Hannad Qureshi »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City