ڈھونڈیں کہاں اب تو ہمیں ، ملبے نہیں ملتے

Poet: اخلاق احمد خان
By: Akhlaq Ahmed Khan, Karachi

ڈھونڈیں کہاں اب تو ہمیں ، ملبے نہیں ملتے
بنتے تھے جن سے کام وہ ، سجدے نہیں ملتے

رُخِ حرم سے اٹھتی پُرسوز صداٶں کو
عرش تک رساٸی کے ، رستے نہیں ملتے

أغوشِ مادر سے ہوں اب کیونکر ولی پیدا
اُسے سننے کو صالحین کے ، قصے نہیں ملتے

أنکھوں کو تاب ہے نہ موسیٰ سی طلب ہے
شکوے ہیں کوہِ طور کے ، جلوے نہیں ملتے

طفلِ حاضر میں کھوجتا ہوں اپنے معصومیت کے دن
مجھ کو مگر ایسے کہیں ، بچے نہیں ملتے

زُبانِ عدل پر مصلحت کا قُفل ہے
انصاف کے تقاضوں پر ، فیصلے نہیں ملتے

قانون بھی حرکت میں أتا ہے تو اس لۓ
جب جرم میں اُسے اپنے ، حصّے نہیں ملتے

اخلاق معاشرے میں بس اک وہی مہذب ہے
جسے اپنے تٸیں کرنے کو ، کارنامے نہیں ملتے

Rate it:
09 Sep, 2019

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Akhlaq Ahmed Khan
Visit 90 Other Poetries by Akhlaq Ahmed Khan »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City