پاکستان میں 157کھرب کا سونا موجود مگر آمدنی کا کوئی پلان نہیں

اسلام آباد (روزنامہ اوصاف) ورلڈ گولڈ کونسل جو ایک مستند عالمی ادارہ ہے کے دس سالہ اعدادو شمار کے مطابق پاکستان میں سونے کی سالانہ کھپت 180 ٹن ہے جس کی عالمی منڈی میں مالیت تقریباً 12 ارب ڈالر ہے یہ سونا ہم درآمد نہیں کرتے، کہا جاتا ہے کہ یہ سونا سمگلنگ کے ذریعے آتا ہے اور نقد ادائیگی کی شکل میں غیر دستاویزی خریدو فروخت ہوتی ہے، سارا معاملہ بالکل غیر دستاویزی ہے۔ اس کے علاوہ پاکستان میں 7 سے 8 ارب ڈالر سالانہ کے ہیرے جواہرات اور قیمتی پتھر بھی ٹیکس نیٹ کے بغیر فروخت ہوتے ہیں، صرافہ بازار کے بیوپاریوں کے مطابق پاکستان میں 22 ہزار جیولرز ہیں، مگر صرف 60 جیولرز سیلز ٹیکس میں رجسٹرڈ ہیں، 21 ہزار 940 جیولرز سالانہ 50 لاکھ روپے سے کم کاروبار کا دعویٰ کرتے ہیں، ان کا دعویٰ ہے کہ وہ روزانہ 14 ہزار روپے سے کم کا بزنس کرتے ہیں، یہ آفیشل پوزیشن ہے لیکن اگر جیولرز کی دکانوں، جگمگاتے شو رومز، کاریگر اور کرائے دیکھیں تو آنکھیں کھلی رہ جائینگی، یہ ایک گھمبیر صورتحال ہے یہ صرف ایک سال کے ٹرن اوور کی بات ہے، اگر ملک میں گھروں اور دکانوں میں جو سونا موجود ہے اس کا اندازہ لگایا جائے تو یہ ایک ہزار ٹن بنتا ہے گویا کہ 100 ارب ڈالر (157 کھرب روپے) سے زیادہ کا سونا موجود ہے اور اس تمام سونے کو اس ایمنسٹی سکیم سے باہر رکھا گیا ہے۔

 

WATCH LIVE NEWS

Samaa News TV PTV News Live Express News Live 92 NEWS HD LIVE Pakistan TV Channels

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.