جارحیت کا جواب خیرسگالی، وزیراعظم کا کرتارپور راہداری کا 9 نومبر کو افتتاح کرنیکا پلان

کرتارپور راہداری منصوبے پر تیزی سے کام جاری، پاکستان نے اپنے حصے کا 86 فیصد کام مکمل کر لیا، 45 دن میں باقی ماندہ کام مکمل کر لیا جائے گا۔

کرتارپور راہداری کے پراجیکٹ ڈائریکٹر عاطف مجید کا میڈیا کو بریفنگ میں کہنا تھا کہ وزیراعظم عمران خان نے گزشتہ سال 28 نومبر کو منصوبے کا سنگ بنیاد رکھا تھا، 9 نومبر کو منصوبے کا افتتاح ہوگا جبکہ 12 نومبر کو بابا گرونانک کا جنم دن منایا جائے گا۔ ابتدائی مرحلے میں پانچ ہزار اور بعد میں دس ہزار یاتریوں کی آمد اور رہائش ہوگی۔

عاطف مجید نے بتایا کہ پاکستان کا سب سے بڑا گردوارہ بابا گرونانک 42 ایکڑ اراضی پر مشتمل ہے جبکہ پنجہ صاحب گردوارہ چار ایکڑ اور ننکانہ صاحب گردوارہ چودہ ایکڑ پر مشتمل ہے۔

انہوں نے کہا کہ ساڑھے تین سال کا منصوبہ صرف دس ماہ میں مکمل کیا گیا ہے۔ منصوبے کا 86 فیصد کام مکمل ہے، 45 دن میں باقی ماندہ کام مکمل کر لیا جائے گا۔ 24 گھنٹے منصوبے پر کام تیزی سے جاری ہے۔ 9 نومبر کو بھارت سے یاتری آنا شروع ہو جائیں گے۔

پراجیکٹ ڈائریکٹر کرتارپور راہداری کا کہنا تھا کہ پانچ ہزار یاتریوں کے داخلے اور خروج کے لئے 76 امیگریشن کاؤنٹرز بنا دئیے گئے ہیں۔ دس ہزار یاتریوں کی آمدورفت کے لئے کل 152 کاؤنٹر بنائے گئے ہیں۔

ان کا کہنا تھا کہ بارڈر ٹرمینل زیرو پوائنٹ سے ساڑھے تین سو میٹر پر تعمیر کیا گیا ہے۔ ٹرمینل کے باہر بسوں کے ذریعے گردوارہ تک یاتریوں کو لایا جائے گا جہاں انھیں ہوائی اڈے جیسی سہولیات مہیا کی جائیں گے۔

عاطف مجید کا کہنا تھ اکہ دریائے راوی کا رخ موڑنے کے لئے ایک نہر نکالی گئی ہے۔ پہلے مرحلے میں یاتریوں کے لئے جدید سہولیات سے مزین ٹینٹ ویلیج بنا رہے ہیں۔ یہ تعمیراتی ایریا دس لاکھ مربع فٹ پر محیط ہے۔

انہوں نے کہا کہ ہر پاکستانی اور بھارتی سکھ یاتری فنگر پرنٹس کے بعد گردوارہ میں داخل ہو سکے گا۔ اس کے علاوہ پیدل یاتریوں کے لئے گزرگاہ بھی تعمیر کی گئی ہے۔

خیال رہے گوردوارہ کی تعمیر میں سکھ مذہب اور تاریخی اہمیت کا مکمل خیال رکھا گیا ہے ، پاکستان نے منصوبےپر مقامی وسائل خرچ کئے،کوئی بیرونی امداد نہیں لی ، بھارت سے یاتریوں کا کرتارپورراہداری بغیر ویزہ مفت داخلہ ہو گا جبکہ امیگریشن ٹرمینل پرآمد کیساتھ مخصوص شناختی کارڈ کا اجراہو گا، یاتری بذریعہ بس گوردوارہ تک پہنچ کرآزادانہ مذہبی رسومات اداکر سکیں گے۔


 

WATCH LIVE NEWS

Samaa News TV PTV News Live Express News Live 92 NEWS HD LIVE Pakistan TV Channels

Meta Urdu News: This news section is a part of the largest Urdu News aggregator that provides access to over 15 leading sources of Urdu News and search facility of archived news since 2008.