آئینوں جب کوئی تصویر دکھاتے کیوں ہو

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

آئینوں جب کوئی تصویر دکھاتے کیوں ہو
اصل چہرہ بھی ذرا سامنے لاتے کیوں ہو

اور کیا، دے ہی چکے ہو جو اندھیرے کو شکست
ایک لحظہ کو سہی جوت جگاتے کیوں ہو

میں ادھر کی بھی نہیں، اور اُدھرکی نہ رہی
تجھ سے راضی بھی نہیں اور جلاتے کیوں ہو

تُو نہیں ہے، تو بھی احساس ترا رہتا ہے
وصل لگتا بھی نہیں اور رلاتے کیوں ہو

اُس کے اظہار سے پہلے کوئی امکان تو تھا
اب جو انکار کیا ہے تو سناتے کیوں ہو

دور ہو زلف رسا کی یہ پریشانی کچھ
اس کو سُلجھاو تو گل کو سجاتے کیوں ہو

Rate it:
01 Nov, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4528 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City