آتشِ ہجر میں خود کو ہی جلا یا کیا ہے

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

آتشِ ہجر میں خود کو ہی جلا یا کیا ہے
میں نے بڑھ کر اسے سینے سے لگا یا کیا ہے

میں نے ہر روز نیا ایک تماشا کر کے
اپنی دنیا کی تمناؤں کا اچھا کیا ہے

ساری دنیا کو بتایا ہے کہ انسان ہوں میں
ایک میلا سا زمانے میں سجایا کیا ہے

اپنے حصے کی بہاروں کو لٹا کر تجھ پر
تیرے دامن کو شراروں سے بچایا کیا ہے

ایک دن دیکھنا لفظوں میں جھلک آئے گا
تم نے جس خون کو گردش میں بہایا کیا ہے

صاف لفظوں میں کرو عرضِ محبت وشمہ
بات کو یونہی مری جا ں نے سوچا کیا ہے

Rate it:
01 Oct, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4524 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City