اس کی نظروں میں انتخاب ہوا

Poet: Jigar Moradabadi
By: anas, khi

اس کی نظروں میں انتخاب ہوا
دل عجب حسن سے خراب ہوا

عشق کا سحر کامیاب ہوا
میں ترا تو مرا جواب ہوا

ہر نفس موج اضطراب ہوا
زندگی کیا ہوئی عذاب ہوا

جذبۂ شوق کامیاب ہوا
آج مجھ سے انہیں حجاب ہوا

میں بنوں کس لیے نہ مست شراب
کیوں مجسم کوئی شباب ہوا

نگۂ ناز لے خبر ورنہ
درد محبوب اضطراب ہوا

میری بربادیاں درست مگر
تو بتا کیا تجھے ثواب ہوا

عین قربت بھی عین فرقت بھی
ہائے وہ قطرہ جو حباب ہوا

مستیاں ہر طرف ہیں آوارہ
کون غارت گر شراب ہوا

دل کو چھونا نہ اے نسیم کرم
اب یہ دل روکش حباب ہوا

عشق بے امتیاز کے ہاتھوں
حسن خود بھی شکست یاب ہوا

جب وہ آئے تو پیشتر سب سے
میری آنکھوں کو اذن خواب ہوا

دل کی ہر چیز جگمگا اٹھی
آج شاید وہ بے نقاب ہوا

دور ہنگامۂ نشاط نہ پوچھ
اب وہ سب کچھ خیال و خواب ہوا

تو نے جس اشک پر نظر ڈالی
جوش کھا کر وہی شراب ہوا

ستم خاص یار کی ہے قسم
کرم یار بے حساب ہوا

Rate it:
09 Apr, 2019

More Jigar Moradabadi Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Owais Mirza
Visit Other Poetries by Owais Mirza »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City