اک شمع محبت کی ہی جلائے ہوئے ہیں

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

اک شمع محبت کی ہی جلائے ہوئے ہیں
قندیل وفا بن کے وہ شرمائے ہوئے ہیں

بدلے ہوئے موسم میں خزاؤں کی جھلک ہے
خواہش کے پرندے جو شجر آئے ہوئے ہیں

تنہائی کےصحراؤں میں جل جاؤں نہ تنہا
آجاؤ کہ پھر باردگر لائے ہوئے ہیں

مجبور سہی وقت سے ہاری جو ہوئی ہوں
وہ بھی تو مرے دل کا نگرپائے ہوئے ہیں

اس سے بھی نہیں مجھ کو یہ شکوہ نہ شکایت
پنچھی بھی محبت کا نظر آئے ہوئے ہیں

یہ رسم وفا عشق و محبت کی بقا ہے
اس عشق کو یوں ہی نہیں بنوائے ہوئے ہیں

بیٹھی ہوں خیالات کی جس سیج پہ وشمہ
یخ بستہ ہواؤں کو یہ بھیلائے ہوئے ہیں

Rate it:
23 Sep, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4528 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City