ایک ان دیکھا چہرہ

Poet: Syed Zulfiqar Haider
By: Syed Zulfiqar Haider, Gujranwala, Pakistan ; Nizwa, Oman

ایک ان دیکھا چہرہ دل میں جگہ بنا بیٹھا
جس سے ملا بھی نہیں اُسے اپنا ہمسفر بنا بیٹھا

اُسے ڈھونڈھتا رہتا ہوں میں ہر ایک چہرے میں
جسے اپنے خوابوں کی دنیا کی ملکہ بنا بیٹھا

چاہت میں ہوش کھو دینا کہاں کوئی نئی بات ہے
میں تو اپنے وجود کو بھی اُس کا مسکن بنا بیٹھا

ہر پل میری سوچوں پر اب اُس کی حکومت ہے
جو کبھی افشاں بھی نہیں ہوا ایسا دلبر بنا بیٹھا

میں چاہ کر بھی اُس کو اپنے سے دور رکھ نہیں پاتا
اس قدر ٹوٹ کر چاہا اُسے اپنی زندگی بنا بیٹھا

میری ہر سانس اب اس کی امانت ہے
میرے محبوب تُجھے اپنی سانسوں کا ما لک بنا بیٹھا

تجھے دیکھنے کی حسرت میں زندہ ہوں ابھی تک
ذوالفقار اُسے اپنے ہونے کا احساس بنا بیٹھا
 

Rate it:
20 Oct, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Syed Zulfiqar Haider
Visit 50 Other Poetries by Syed Zulfiqar Haider »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City