بلاتے کیوں ہو

Poet: م الف ارشیؔ
By: Muhammad Arshad Qureshi (Arshi), Karachi

تم کو ملنا ہی نہیں روز بلاتے کیوں ہو
اپنا دیوانہ بنا کر یوں رلاتے کیوں ہو

تم کو معلوم ہے اب ہوگا ملن اپنا نہیں
میری آنکھوں میں پھر امید جگاتے کیوں ہو

اس سے پہلے جو کیا تم نے وہی کافی ہے بس
اب تماشا نیا دنیا کو دکھاتے کیوں ہو

جس کی تعبیر نہیں کوئی بتاتا ہے یاں
خواب ایسا کوئی آنکھوں میں سجاتے کیوں ہو

تم کو ملنا نہیں ہم سے تو کھل کر بولو
ہم کو ہر بار نیا روگ لگاتے کیوں ہو

تیری خاطر یہاں کیا کچھ نہ بھلایا ہم نے
ہم پہ احسان کوئی اپنا جتاتے کیوں ہو

یہ مکافاتِ عمل ہے اسے ہونا ہی تھا
خود کو اپنی ہی نظروں سے گراتے کیوں ہو
 

Rate it:
01 Nov, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Muhammad Arshad Qureshi
My name is Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) belong to Karachi Pakistan I am
Freelance Journalist, Columnist, Blogger and Poet.​President of Internati
.. View More
Visit 191 Other Poetries by Muhammad Arshad Qureshi »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City