بُرا کیا تھا محبت میں ہوا تو یہ کیا سمجھا

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

بُرا کیا تھا محبت میں ہوا تو یہ کیا سمجھا
وصالِ یار بس مری رضا پر ہی ملا سمجھا

مسافت کی تھکن کا بوجھ کچھ معنی نہیں رکھتا
کنارے پر اترتے وقت کوئی راستہ سمجھا

وفا میری پریشاں کرگئی نامہرباں جیسے
اثر اس کی جفا کا بھی صبا سےہی ہوا سمجھا

دعا کرنا کہ جگنو رات تاریکی میں جب چمکیں
تمہاری اور جانے کے سبھی رستہ اچھا سمجھا

تھکے قدموں سے گزری ساتھ ساری زندگی اپنی
نہ اس کا ہم قدم میں تھا نہ وہ تھا آسرا سمجھا

سخن پر میرے بس ان کا ہی غلبہ ہے اجارہ ہے
تصور میں وہ آتے ہیں تو چلتی ہے ہوا سمجھا

مزاج یار تو برہم ہمیشہ سے وہ تھا وشمہ
ترے جیسا اگر ہوتا، ذرا دیوانہ سا سمجھا

Rate it:
30 Sep, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4524 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City