بٗجھاتے کیوں ہو روشنی کو ، قندیل میں کرلو

Poet: اخلاق احمد خان
By: Akhlaq Ahmed Khan, Karachi

بٗجھاتے کیوں ہو روشنی کو ، قندیل میں کرلو
دین کو حکومتی ، تحویل میں کرلو

مرجائے گی آزادی سلب ہونے کے غم میں
تم دریا کی مچھلی کو ، جھیل میں کرلو

اب کہاں میؔسر سالہا سال پانی
گزارا انہیں موسمی ، سبیل میں کرلو

حق کے خلاف کہاں سے لاو گے شواہد
دجالی میڈیا کو ہی ، دلیل میں کرلو

ہر استدراج کے بعد پکڑ ہے رب کی
کرنا ہے جو تم کو اس ، ڈھیل میں کرلو

اخلاق یہ پیام ہے میرا وقت کے فرعونوں کو
اَبرھا بننے سے پہلے غور سورہ ، فِیل میں کرلو

Rate it:
25 Nov, 2018

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Akhlaq Ahmed Khan
Visit 92 Other Poetries by Akhlaq Ahmed Khan »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City