تصور جہاں کا خوابیدہ ہمارا

Poet: Prof. Niamat Ali Murtazai
By: Prof. Niamat Ali Murtazai, Karachi

تصور جہاں کا خوابیدہ ہمارا
عقیدہ سراپا شنیدہ ہمارا

ہوس نے بھرا ہے زہر زندگی میں
ہوا دل ہے خواہش گَزیدہ ہمارا

یوں تیرِ نظر آ لگا پار دل کے
کہ سر ہو گیا شوریدہ ہمارا

پڑی ہے مروت کی میت کفن میں
دہن ہو گیا ہے دریدہ ہمارا

سنی ہے خبر ان کے آنے کی ہم نے
چمن ہو گیا ہے دمیدہ ہمارا

غلامانہ سوچوں کے گہرے اثر سے
ذہن ہو گیا ہے خمیدہ ہمارا

چھپائیں گے ہاتھوں سے منہ کو گناہ بھی
کھلے گا حشر میں جریدہ ہمارا

نہیں ہے کوئی بات اپنے میں ایسی
ہوا نہ کہے گی قصیدہ ہمارا

ہوا کو حکم ہے کہ پتے گرا دو
پتہ لوں میں دل تھا بوسیدہ ہمارا

بنانے ہیں شاید یہاں پھول بوٹے
کوئی کر رہا دل کشیدہ ہمارا

نہیں مرتضائیؔ کو شکوہ کسی سے
مقدر ہوا ہے رمیدہ ہمارا

Rate it:
03 Feb, 2015

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Niamat Ali
LIKE POETRY, AND GOOD PIECES OF WRITINGS.. View More
Visit 25 Other Poetries by Niamat Ali »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City