جسم کے دام کفن کو خرید کہ جس نے

Poet:
By: Usman Ali Aafi, Gujrat


جسم کے دام کفن کو خرید کہ جس نے یہ زانی کا داغ رکھا ہے
اس نے پتا نہیں کتنے ہی لوگوں کی آبرو کا یہ سراغ رکھا ہے

ایک لقب ملا ہے یہ یتیم ہونے پہ اور ایسا لقب ملا مجھ کو
ہاں مرے پاس یہ آبرو ہے جسے میں نے بنا کے چراغ رکھا ہے

ایسے ڈرے ہیں ہم اور ہمارے رقیب زمانےکی چال سے کہ
بازوں میں قوتِ دم ہے مگر ہم نے ساتھ میں یہ چماغ رکھا ہے

یہ مجھے ورثے میں ایسی زمینیں مل رہی ہیں کہ کیا کہوں اب میں
اشک ہیں پلکوں پہ یوں اور ان میں بھی زہر کا خاص سراغ رکھا ہے

اتنی ہے آرزو جینے کی , روز غموں کا پیالہ لے کر بھی میں عافی
یہ مرے جسم کی ان رگوں نے جینےکا بڑا اچھا دماع رکھا ہے
 

Rate it:
26 Aug, 2019

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Usman Ali Aafi
Visit 18 Other Poetries by Usman Ali Aafi »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

ماشااللہ ہمیں ایسے ہی شاعر کی ضرورت ہے جو معاشرے میں برائی ختم ے کے لیے لکھے

By: Noori Naz, gujrat on Aug, 26 2019

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City