جنگ

Poet: م الف ارشیؔ
By: Muhammad Arshad Qureshi, Karachi

ساری باتوں پہ سیاست نہیں کی جاسکتی
اس پہ قربان روایت نہیں کی جاسکتی

یہ ضروری نہیں ہر بات پہ لڑتے ہی رہیں
سب ہی انسان ہیں نفرت نہیں کی جاسکتی

جو بھی رنجش ہے چلو آؤ ختم کرتے ہیں اب
روٹھنے میں تو یوں شدت نہیں کی جاسکتی

جگ ہنسائی کے سوا اور ملے گا ہی کیا
اپنی خود ہی تو یوں ذلت نہیں کی جاسکتی

آؤ اس بات کو سوچیں کہ بھلا اب بھی کیوں
ہم سے اپنوں کی کفالت نہیں کی جاسکتی

جنگ تو خود ہی مسائل کو جنم دیتی ہے
اس کو کرنے کی حماقت نہیں کی جاسکتی

جنگ کر کے بھی تباہی کے سوا کیا ہو گا
اپنی نسلوں سے عداوت نہیں کی جاسکتی
 

Rate it:
04 Mar, 2019

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Muhammad Arshad Qureshi
My name is Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) belong to Karachi Pakistan I am
Freelance Journalist, Columnist, Blogger and Poet.​President of Internati
.. View More
Visit 191 Other Poetries by Muhammad Arshad Qureshi »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City