جینے کی سکت

Poet: Syed Zulfiqar Haider
By: Syed Zulfiqar Haider, Gujranwala

مجھ میں جینے کی سکت اب باقی نہیں
بوجھ اور اُٹھا پاوَں ایسی خواہش اب باقی نہیں

جس کے ہونے سے تھی قائم دنیا میری
وقت پلٹا رشتے اُلجھے نسبت اُن سے اب باقی نہیں

اب بکھروں یا سمٹوں کون ہامی اپنا
دنیا کی رغبت جینے کی تمنا اب باقی نہیں

بگڑی کچھ ایسے اُن سے دور ہو گئے وہ مجھ سے
وقت کی ایسی ضرب لگی پھر سے اُٹھنے کی ہمت اب باقی نہیں

ہر طرف اندھیرا سا حائل میں سہما سا گھم سم
موت کی آندھی ہے شاملِ حال اور کچھ اب باقی نہیں

ملن کی آس میں ننگے پاوَں چلا بہت دور تلک
اب آس ہی روٹھ چکی مسافت بھی تواب باقی نہیں

سسک سسک کے دم ٹوٹ رہا ہے شایداب جانا ہوگا
نہ کوئی ہمدم ہے نہ ہی ہمکلام رُکنے کی حسرت اب باقی نہیں

Rate it:
10 Oct, 2018

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Syed Zulfiqar Haider
Visit 50 Other Poetries by Syed Zulfiqar Haider »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

لاجواب

By: عاصم اکرام, Khewara on Oct, 22 2018

smashing

By: Balaj Hyder, Jacobabad on Oct, 15 2018

good

By: Abdul Karim, Rawalpindi on Oct, 15 2018

Very sad deep meaning

By: Samera, Gujrat on Oct, 15 2018

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City