خوف سا حاوی رہا

Poet: م الف ارشیؔ
By: Muhammad Arshad Qureshi (Arshi), Karachi

خوف سا حاوی رہا تدبیر سے ڈرتے رہے
تھی پڑی جو پاؤں میں زنجیر سے ڈرتے رہے

ہو گیا ہے اب عجب ماحول سارے شہر کا
آرزو شہرت لیے تشہیر سے ڈرتے رہے

جوڑ کے ساری کمائی پھر بنایا تھا جسے
اس کی خاطر عمر بھر شب گیر سے ڈرتے رہے

لاکھ کوشش ہم نے کی جس کو بھلانے کے لیے
ہو نہ جائیں پھر کہیں دلگیر سے ڈرتے رہے

جس محبت کے لیے دن رات مانگی تھی دعا
اس محبت کی مگر تشہیر سے ڈرتے رہے

زندگی بھر ساتھ رہنے کا وہ وعدہ بھول کر
ایک جھوٹے خواب کی تعبیر سے ڈرتے رہے

ڈر جنہیں لگتا نہیں تھا تیر یا شمشیر سے
عمر بھر وہ میری اک تحریر سے ڈرتے رہے

Rate it:
05 Nov, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Muhammad Arshad Qureshi
My name is Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) belong to Karachi Pakistan I am
Freelance Journalist, Columnist, Blogger and Poet.​President of Internati
.. View More
Visit 189 Other Poetries by Muhammad Arshad Qureshi »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City