در آیا اندھیرا آنکھوں میں اور سب منظر دھندلائے ہیں

Poet: Shabnam Shakeel
By: Muzammil, khi

در آیا اندھیرا آنکھوں میں اور سب منظر دھندلائے ہیں
یہ وقت ہے دل کے ڈوبنے کا اور شام کے گہرے سائے ہیں

یہ ذرا ذرا سی خوشیاں بھی تو لاکھ جتن سے ملتی ہیں
مت چھیڑو ریت گھروندوں کو کس مشکل سے بن پائے ہیں

وہ لمحہ دل کی اذیت کا تو گزر گیا اب سوچنے دو
کیا کہنا ہوگا ان سے مجھے جو پرسش غم کو آئے ہیں

جلتی ہوئی شمعوں نے اکثر احساس کی راکھ کو بھڑکایا
قربت میں دمکتے چہروں کی تنہائی کے دکھ یاد آئے ہیں

سوچوں کو تر و تازہ رکھا شبنمؔ ترے پیہم اشکوں نے
حیرت ہے کہ عہد خزاں میں بھی یہ پھول نہیں کمھلائے ہیں

Rate it:
18 Jul, 2019

More Shabnam Shakeel Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Owais Mirza
Visit Other Poetries by Owais Mirza »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City