دل مرا سوز نہاں سے بے محابا جل گیا

Poet: Deewan-e-Ghalib
By: huma, khi

دل مرا سوز نہاں سے بے محابا جل گیا
آتش خاموش کی مانند گویا جل گیا

دل میں ذوق وصل و یاد یار تک باقی نہیں
آگ اس گھر میں لگی ایسی کہ جو تھا جل گیا

میں عدم سے بھی پرے ہوں ورنہ غافل بارہا
میری آہ آتشیں سے بال عنقا جل گیا

عرض کیجے جوہر اندیشہ کی گرمی کہاں
کچھ خیال آیا تھا وحشت کا کہ صحرا جل گیا

دل نہیں تجھ کو دکھاتا ورنہ داغوں کی بہار
اس چراغاں کا کروں کیا کار فرما جل گیا

میں ہوں اور افسردگی کی آرزو غالبؔ کہ دل
دیکھ کر طرز تپاک اہل دنیا جل گیا

خانمان عاشقاں دکان آتش باز ہے
شعلہ رو جب ہو گئے گرم تماشا جل گیا

تا کجا افسوس گرمی ہاۓ صحبت اے خیال
دل بہ سوز آتش داغ تمنا جل گیا

ہے اسدؔ بیگانۂ افسردگی اے بیکسی
دل ز انداز تپاک اہل دنیا جل گیا

دود میرا سنبلستاں سے کرے ہے ہم سری
بسکہ شوق آتش گل سے سراپا جل گیا

شمع رویاں کی سر انگشت حنائی دیکھ کر
غنچۂ گل پرفشاں پروانہ آسا جل گیا

 

Rate it:
17 Feb, 2017

More Deewan-e-Ghalib Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: owais mirza
Visit Other Poetries by owais mirza »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City