ساون کے اس موسم میں۔۔۔

Poet: طارق اقبال حاوی
By: Tariq Iqbal Haavi, Lahore

ساون کے اس موسم میں
کیا معلوم، کب، کس جگہ پر؟
بادل گرجے، بارش برسے
چھتری ساتھ میں رکھ لیتا ہوں
نکلوں میں جب بھی گھر سے
لیکن اکثر یوں ہوتا ہے
جھٹ سے بادل آ جاتے ہیں
جھٹ سے بارش ہو جاتی ہے
چھتری کھلنے سے پہلے ہی
بارش مجھے بھگو جاتی ہے
تم بھی اکثر یوں کرتے ہو
کیا معلوم، کب، کس جگہ پر؟
اچانک ہی سے آ جاتے ہو
ہر بار میری سنے بنا ہی
اپنا سب سنا جاتے ہو
بادل سا گرج جاتے ہو
ساون سا برس جاتے ہو
تم آنکھیں بھگو جاتے ہو
اس سے پہلے کہ کچھ بولوں
تم اپنے رستے ہو جاتے ہو
اور میرے لب اس چھتری جیسے
کھلتے کھلتے رہ جاتے ہیں
ہر بار کے جیسے میرے شکوے
اشکوں کے سنگ بہہ جاتے ہیں

Rate it:
22 Jul, 2017

More Rain/Barish Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Tariq Iqbal Haavi
میں شاعر ہوں ایک عام سا۔۔۔
www.facebook.com/tariq.iqbal.haavi
.. View More
Visit 126 Other Poetries by Tariq Iqbal Haavi »

Reviews & Comments

very Nice
sty blessed

By: uzma, Lahore on Jul, 26 2017

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City