سایہ دھیرے دھیرے ڈھل جاتا ہے

Poet: Sobiya Anmol
By: sobiya Anmol, Lahore

سایہ دھیرے دھیرے ڈھل جاتا ہے
وقت بدلتے بدلتے بدل جاتا ہے

کب تک کوئی ٹھوکریں کھاتا ہے
کھا کھا کے ٹھوکر سنبھل جاتا ہے

لوگ چہرے بھی بھول جاتے ہیں
مطلب جب اپنا نکل جاتا ہے

یہ بددُعا ہے ٗ اِس میں آ کے
احاطۂ سینہ و جگر جل جاتا ہے

خالی ہاتھ ہر طرح ہو جاتا ہے بشر
سینے سے نکل کر جب دل جاتا ہے

راہوں سے ہی بھٹک جاتا ہے یہ
جب جب بھی راہِ منزل جاتا ہے

ریزہ ریزہ تو تب ہی ہو جاتا ہے
کسی کی اداؤں سے جب بہل جاتا ہے

Rate it:
28 Oct, 2018

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: sobiya Anmol
what can I say,people can tell about me... View More
Visit 128 Other Poetries by sobiya Anmol »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City