صبح کو آئے ہو نکلے شام کے

Poet: Hafeez Jaunpuri
By: manahil, khi

صبح کو آئے ہو نکلے شام کے
جاؤ بھی اب تم مرے کس کام کے

ہاتھا پائی سے یہی مطلب بھی تھا
کوئی منہ چومے کلائی تھام کے

تم اگر چاہو تو کچھ مشکل نہیں
ڈھنگ سو ہیں نامہ و پیغام کے

چھیڑ واعظ ہر گھڑی اچھی نہیں
رند بھی ہیں ایک اپنے نام کے

قہر ڈھائے گی اسیروں کی تڑپ
اور بھی الجھیں گے حلقے دام کے

محتسب چن لینے دے اک اک مجھے
دل کے ٹکڑے ہیں یہ ٹکڑے جام کے

لاکھوں دھڑکے ابتدائے عشق میں
دھیان ہیں آغاز میں انجام کے

مے کا فتویٰ تو سہی قاضی سے لوں
ٹوک کر رستے میں دامن تھام کے

دور دور محتسب ہے آج کل
اب کہاں وہ دور دورے جام کے

نام جب اس کا زباں پر آ گیا
رہ گیا ناصح کلیجا تھام کے

دور سے نالے مرے سن کر کہا
آ گئے دشمن مرے آرام کے

ہائے وہ اب پیار کی باتیں کہاں
اب تو لالے ہیں مجھے دشنام کے

وہ لگائیں قہقہے سن کر حفیظؔ
آپ نالے کیجئے دل تھام کے

Rate it:
06 Nov, 2019

More Hafeez Jaunpuri Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Owais Mirza
Visit Other Poetries by Owais Mirza »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Hafeez Jaunpuri poetry's 'Subha Ko Aye Ho Niklay Shaam Kai' is the best lines which message is simple because poet have an ability to write poetry in simple way.

By: gul, khi on Nov, 06 2019

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City