مجھ کو بھی کوئی ہمدم و ہم راز چاہیے

Poet: خالد ندیم
By: Khalid Nadeem, Sargodha

مجھ کو بھی کوئی ہمدم و ہم راز چاہیے
نغمہ ہے میرے پاس ، بس اِک ساز چاہیے

میری جبینِ شوق میں سو سو نیاز ہیں
لیکن کسی میں حوصلۂ ناز چاہیے

گلشن میں اب بہار بھی ہے ، رنگ و بو بھی ہیں
بلبل بھی اس میں زمزمہ پرداز چاہیے

منکر ہے کون وسعتِ افلاک کا ، مگر
شاہین کو بھی رفعتِ پرواز چاہیے

اہلِ فلک کو چھوڑیے ، ان کے نصیب ہیں
ہم خاک پر ہیں ، ہم کو تگ و تاز چاہیے

تجھ کو ہے انتہاے محبت کی آرزو
لیکن مجھے کہیں سے تو آغاز چاہیے

خالد ندیم! میرے لیے بھی دعا کریں
مجھ کو بھی کوئی آپ سا دم ساز چاہیے

Rate it:
07 Dec, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Khalid Nadeem
Visit 2 Other Poetries by Khalid Nadeem »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City