موسمِ گل سے شرارت نہیں کی جا سکتی

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

اب بہاروں سے تجارت نہیں کی جا سکتی
موسمِ گل سے شرارت نہیں کی جا سکتی

ہم اگر موت کے پنجے سے نہیں بچ سکتے
زندگی تجھ سے بغاوت نہیں کی جا سکتی

خشک آنکھوں میں سمندر نہ اتر آئے کہیں
غم کے دریا کی کفالت نہیں کی جا سکتی

جن کے ڈسنے کا اندیشہ ہو سرِ راہ گزر
ایسے سانپوں کی وکالت نہیں کی جا سکتی

تو جو مدت سے ہی پتھر ہے مرے رستے کا
اب ترے شہر سے ہجرت نہیں کی جا سکتی

جس کی پاداش میں جل جائیں سنہری آنکھیں
عشق میں ایسی سخاوت نہیں کی جا سکتی

تو نے بخشا ہے مجھے ذوقِ محبت وشمہ
تیرے افکار سے نفرت نہیں کی جا سکتی

Rate it:
03 Mar, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4524 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City