میں اپنی منزل ومقام کی انتہا لیے بیٹھا ہوں

Poet: اَمیر عثمان
By: Ameer Usman, Ali Pur Chattha

میں اپنی منزل ومقام کی انتہا لیے بیٹھا ہوں
جی میں ماں باپ کی دُعا لیے بیٹھا ہوں

تم دن کی روشنی میں تلاش کر رہے ہو جِسے
وہ میں اپنے اندر ہی لامکاں لیے بیٹھا ہوں

رات میں تنہاٸی نہیں تم سُن لو آج
رات میں میں تو مکمل جہاں لیے بیٹھا ہوں

جو اک مسلم کی پہچان ہے اور ایمان بھی
جی میں وہ ہی تو اذاں لیے بیٹھا ہوں

تم مسلم فرقوں میں ڈال رہے ہو مُلاں
دیکھ مجھے پڑھ میں دردِ انساں لیے بیٹھا ہوں

Rate it:
17 Jul, 2019

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Ameer Usman
Visit 5 Other Poetries by Ameer Usman »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City