نظم

Poet: اخلاق احمد خان
By: Akhlaq Ahmed Khan, Karachi

فتنہ
یہ دھوٸیں کے اٹھتے ہوۓ سیاہ بادل
اپنی أغوش میں چھپاتے ہیں أسماں کو

أگ جنگل کی بُجھانا بھی ہے لازم مگر
بھولٸیے نہ اِس کے سبب أتش فشاں کو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نظم
بندھی ہے جس سے جان
وہ جان تمہیں دے دیں؟
یعنی بہار کے أنے کا
امکان تمہیں دے دیں ؟

سختی تپش کی سہہ لی ہے
رات غموں کی جھیلی ہے
بسنت رُت اب أٸی تو
گلستان تمہیں دے دیں ؟

پھول تو اپنی خوشبو سے
جانا جاتا ہے
یعنی کہ ہم اپنی
پہچان تمہیں دے دیں ؟

یعنی پہلے ہم بھی
تم کو پناہ دیں
پھر رفتہ رفتہ اپنا
مکان تمہیں دے دیں ؟

ننھے پھولوں کو توڑو تم
رُخ شاخوں کا موڑو تم
یعنی کھیلنے کے لۓ طفل کا
ایمان تمہیں دے دیں ؟

راہ سے بھٹکانے کو
سادہ لوح انسانوں کو
لقب حق کے راہی کا
مسلمان تمہیں دے دیں ؟

خود ساختہ خدا تیرا
نبی بھی کاذب ہے
چاہتے ہو پھر بھی کلامِ حق
قرأن تمہیں دے دیں ؟

منافق و دو رنگی تم
فتنہِ فِرنگی تم
ہم ارضِ پاک پر اک اور
قادیان تمہیں دے دیں ؟

اپنی حدوں میں رہنے کا
سلیقہ سیکھٸیے صاحب
یوں نہ ہو کہ دھکا
صاحبِ جان تمہیں دے دیں

پاکستان کا مطلب کا ؟
دے دو بیٹا خلافت پہ جاں
أٶ بچوں ان نعروں کا
گِیان تمہیں دے دیں

سماج سے گر نراشی ہو
سچ کے متلاشی ہو
أٶ پاس ہمارے حق کی
پہچان تمہیں دے دیں

Rate it:
03 Sep, 2019

More Religious Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Akhlaq Ahmed Khan
Visit 92 Other Poetries by Akhlaq Ahmed Khan »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City