واپسی

Poet: اابوبکر راں
By: اابوبکر راں, Gujranwala

وہ سردیوں کی صبح میں
دھند میں لپٹ کر ہم جائیں
ان کچے پکے راہوں سے
اس منظر تک جو پہنچ پائیں
کہ پتوں پر جو برف جمی
رات کی سرد ہواوں سے
اب دھوپ کی کوسی کرنوں سے
وہ قطرہ قطرہ پگھلی ہے
پودوں پر دھیمی سی رنگت
اب لمحہ لمحہ نکھری ہے
کہ اتنے میں اک سیٹی سی
جو کانوں میں آ پہنچی ہو
کہ لمحہ بھر ہم ساکت سے
اس طلسم میں پھر کھو جائیں
اس آس پہ وہاں ہم بیٹھے ہوں
کہ اب اترے تو تب اترے
مگر جو اک بار جاتا ہے
وہ واپس پھر کب آتا ہے
مگر یہ منظر اپنا سا
میری آنکھوں کو یوں بھاتا ہے
کہ میں اس سحر میں کھوکر
پھر خود کو بھول جاتا ہوں
اس رستے پے چل کر
میں واپس آ نہ پاتا ہوں
پھر واپس آنہ پاتا ہوں

Rate it:
23 Dec, 2018

More Sad Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: اابوبکر راں
Visit 2 Other Poetries by اابوبکر راں »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City