وضاحت

Poet: م الف ارشیؔ
By: Muhammad Arshad Qureshi, Karachi

میرے رب نے ہی تو بس مجھ پہ عنایت کی ہے
مجھ سے دنیا کے خداؤں نے شکایت کی ہے

میں شکستہ تمہیں اب جو نظر آتا ہوں یہاں
یہ بھی تو میرے ہی اپنوں نے عنایت کی ہے

جانے کیوں تو نے مجھے خود سے جدا رکھا ہے
تیری خاطر ہی تو دنیا سے بغاوت کی ہے

یہ الگ بات ہے تنہا ہی رہے ہیں لیکن
ہم نے جس سے بھی کی بے لوث محبت کی ہے

دل کی جاگیر یہ ملی تھی کبھی ہم کو بھی
اس کے دل پر کبھی ہم نے بھی حکومت کی ہے

کیا یہ کم ہے یہاں جو ہم کو ہنر آتا ہے
ہم نے اس دور میں انساں سے محبت کی ہے

جانے کب تم کو یقیں ہوگا مری باتوں کا
میں نے ہر بات کی تو تم سے وضاحت کی ہے
 

Rate it:
28 Jan, 2019

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Muhammad Arshad Qureshi
My name is Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) belong to Karachi Pakistan I am
Freelance Journalist, Columnist, Blogger and Poet.​President of Internati
.. View More
Visit 189 Other Poetries by Muhammad Arshad Qureshi »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City