وہی اجڑی ہوئی شامیں وہی ہیں غم گلستاں میں

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: washma khan, Kuala Lampur

غموں کا پھر وہی موسم ،وہی آہیں ہیں ارماں میں
وہی اجڑی ہوئی شامیں وہی ہیں غم گلستاں میں

میں اک پل بھی نہیں بھولی تری سانسوں کی خوشبو کو
رفاقت کے سبھی قصے ابھی ہیں یاد جاناں میں

میں کیسے بھول سکتی ہوں محبت کی کہانی کو
جو میرے دل میں رہتا تھا ، رہے گا میرے ایماں میں

یہاں تو مشغلہ ہے ہر کسی کو دل دکھانے کا
کسی کا دل نہیں توڑو ،لکھا ہے صاف قرآں میں

خدارا اپنی نظروں سے مجھے گرنے نہیں دینا
وگرنہ خاک بن جاؤں گی تیری چشم حیراں میں

تری لوحِ جبیں پر عشق کی تحریر دیکھی ہے
مگر دل کو نہیں دیکھا ترے چاکِ گریباں میں

میں اپنے فن کی کرتی آبیاری کس طرح وشمہ
رہی مصروف میں تو زندگی سے عہد و پیماں میں

Rate it:
06 May, 2017

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4532 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City