وہی تو رسم و رہ عاشقی نبھاتے ہیں

Poet: آفتاب غنی منعم
By: Aftab Khan, Lahore

وہی تو رسم و رہ عاشقی نبھاتے ہیں
جو زخم کھا کے محبت میں مسکراتے ہیں

ہمارے دل میں ہے آلام کا جہاں آباد
اور اُس پہ لوگ ہمیں اپنے دُکھ سناتے ہیں

مسافرانِ عدم کارواں پہ کیا گُزری؟
ہم ایک ایسی کہانی تمھیں سناتے ہیں

اُسے ہماری محبت پہ رشک آتا ہے
یہاں پہ جس سے بھی ہم رسم و رہ بڑھاتے ہیں

یہ دُنیا راہ میں کانٹے بکھیر دیتی ہے
تمھاری سمت اگر ہم قدم اُٹھاتے ہیں

کسی نے ہجر کی راتوں کا ذکر چھیڑ دیا
ستارے سے مری پلکوں پہ جھلملاتے ہیں

ہمارے ملنے کو ہر گز سُبک سری نہ کہو
ادھر سے گُزرے تو سوچا کہ ملتے جاتے ہیں

تو خوش نصیب ہے منعم جو ان کو دیکھتا ہے
سو آئینے ترے قدموں پہ سر جھکاتے ہیں

Rate it:
22 Sep, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Aftab Khan
Visit 2 Other Poetries by Aftab Khan »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City