کوئی وعدہ ترا وفا نہ ہوا

Poet: Zeeshan Lashari
By: Zeeshan Lashari, Kunri

کوئی وعدہ ترا وفا نہ ہوا
پھر بھی کیوں تجھ سے دل خفا نہ ہوا

کیا ضروری ہے داستان کہوں
ہے خلاصہ کہ وہ مرا نہ ہوا

بے دلی سے عبادتیں کرنا
ہم سے یہ کام اے خدا نہ ہوا

بس یہی زندگی قیامت ہے
کیا ہے وہ حشر جو بپا نہ ہوا

واعظو مے بری نہیں اتنی
خلد بھی جبکہ مے سوا نہ ہوا

آخرت میں خدا عذاب نہ دے
کیا ستم ہے جو یاں روا نہ ہوا

بس یہی عشق ہے سوا اس کے
یاں مرض کوئی لا دوا نہ ہوا

بے ضرر زندگی گزاری ہے
ہم سے غیروں کا بھی برا نہ ہوا

ایک افسوس ہے جو باقی ہے
وہ درِ دل جو ہم پہ وا نہ ہوا

ہم نے کئی بار ان سے باتیں کیں
عرض لیکن وہ مدعا نہ ہوا

بات جب چل پڑی محبت کی
اٹھ کے محفل سے وہ روانہ ہوا

ہم نے غالبؔ کو بار بار پڑھا
حق تو یہ ہے کہ حق ادا نہ ہوا

ہو گئی شانؔ عمر قید تجھے
جو پھنسا زلف میں رہا نہ ہوا

Rate it:
03 Nov, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Zeeshan Lashari
Visit 16 Other Poetries by Zeeshan Lashari »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City