کہہ دو

Poet: Malik Mahmood Akhtar
By: Malik Mahmood Akhtar, Multan

سرت بنی جو خواہشیں
ان خواہشوں سے کہہ دو

ہم ٹوٹ کربکھرے نہیں
آزمائشوں سے کہہ دو

پنہاں ہمارے سینے میں
اک صبر کا سمندر

تم ہی ڈوب جاو گے
پیمائشوں سے کہہ دو

گرنے نہ دیں گے روح کو
خباثتوں کے جوہڑ میں

ابھرو نہیں ، حد میں رہو
آلائشوں سے کہہ دو

مکان گرچہ خستہ اپنے
حوصلے ہیں مثل چٹاں

جم کے برسو ، خوب برسو
بارشوں سے کہہ دو

خاک نشیں ، خاک بسر
ہم خاک کے پیوند اختر

تم قیصروں کے ہم نشیں
آرائشوں سے کہہ دو

Rate it:
08 Aug, 2019

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Malik Mahmood Akhtar
Visit 6 Other Poetries by Malik Mahmood Akhtar »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City