ھمیں تو یہ دھماکے قیامت کا سفر لگتا ھے

Poet: Hassan Kayani
By: Hassan Kayani, Leeds (UK)

بدلتی رتوں سے تو شاد شجر لگتا ھے
پھر بھی موسم کے تیور سے ڈرلگتا ھے

ابر رحمت سے تو سیراب ھو گئی کھیتیاں
مگر ڈوبا ھوا سیلاب میں سارا شھر لگتا ھے

ھجرت کرنے والوں کے درد سے آشنا نہیں لوگ
ان کو تو یہ نا گفتہ بہ حالات اپنا گھر لگتا ھے

ساحل پہ بھروسا تھا کہ وہ ھے طوفان شناس
مگر یاںتو ھر اک سفینے میں بھنور لگتا ھے

درباری داد و تحسین کی بارش برساتے رھے
شہر میں ھر پیڑ پہ ایسا ھی ثمر لگتا ھے

وطن میں سازشوں نے اجالوںکا گلا گھونٹ دیا
اب تو ھر ظلمت شب سے اغیار کا گھر لگتا ھے

حسن ویراں ھے شھراور سنساں ھیں راستے
ھمیں تو یہ دھماکے قیامت کا سفر لگتا ھے

Rate it:
03 Sep, 2016

More General Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Hassan Kayani
Visit 122 Other Poetries by Hassan Kayani »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City