ہوتا ہے شب و روز تماشا مرے آگے

Poet: maqsood hasni
By: maqsood hasni, kasur

1

بازیچہء اطفال ہے دنیا مرے آگے
ہوتا ہے شب و روز تماشا مرے آگے
غالب

ایہ دنیا
بالاں دا کھیڈ تماشا
ویکھی جاؤ
جو ہوندا دن راتیں

2

آئینہ کیوں نہ دوں کہ تماشا کہیں جسے
ایسا کہاں سے لاؤں کہ تجھ سا کہیں جسے
غالب

کیتھوں آوے دوجا
انہونی ویکھو
جہڑا شیشے چہاتی پاوے
اوتھے اوہو جیا

3

گو ہاتھ کو جنبش نہیں‘ آنکھوں میں تو دم ہے
رہنے دو ابھی‘ ساغر و مینا مرے آگے
غالب

کیہ ہویا
ہتھاں وچ جرتا ناہیں
اکھاں وچ چانن ہیگا
اجے رہن دیو
اگوں نہ چکو
صراحی پیالہ

4

دل پھر طواف کوئے ملامت کو جائے ہے
پندار کا صنم کدہ ویراں کیے ہوے
غالب

دل کر دا
اج فر ادھر چلیے
جیدھرلتراں دی ونڈ
پہن
آکڑ دے سپ دا ڈنگ

5

ہے آدمی بجائے خود اک محشر خیال
ہم انجمن سمجھتے ہیں‘ خلوت ہی کیوں نہ ہو
غالب

اکلاپے وچ وی
کد کلا ہوندا
بندہ ایس دھرتی دا
غالب

6

کون جیتا ہے تری زلف کے سر ہونے تک
غالب

عمراں دے دن
دو چار دیہاڑے
تیریاں زلفاں دے ول
لکھ ہزاراں

7

مدت ہوئی ہے یار کو مہماں کیے ہوے
جوش قدح سے بزم چراغاں کیے ہوے
غالب

مدتاں ہویاں
تیری مہمانی نوں
ہن رج پی کے
تیرے آون جئے
دیوے بالدے آں

8

ہر اک بات پہ‘ کہتے ہو‘ تو کیا ہے
تم ہی کہو‘ یہ انداز گفتگو کیا ہے
غالب

آپے دس
بولن دا ایہ کیجا چالا
ہر گل تے کہنا ایں
توں کیہ ایں

9

ترے وعدے پر جیے ہم‘ تو یہ جان جھوٹ جانا
کہ خوشی سے مر نہ جاتے جو اعتبار ہوتا
غالب

تیرے وعدے
ساڈے جین دا سبب نئیں
خوشی نال مر جاندے
تیری جب دا
جے اعتبار ہوندا

10

اور لے آئےبازار سے گر ٹوٹ گیا
ساغر جم سے مرا جام سفال اچھا ہے
غالب

ٹٹ گیا تے
ہور لئےآواں گے
ایہ جمشید دا پیالہ نئیں
چنگا اوہو
جہڑا بازاروں مل جاندا

11

ہم بھی منہ میں زبان رکھتے ہیں
کاش پوچھو مدعا کیا ہے
غالب

ساڈے منہ وچ وی جب آ
کدی تاں پچھو
کیہ چاہنا ایں

12

سو بار بند عشق سے آزاد ہوئےہم
پر کیا کریں کہ دل ہی عدو ہے فراغ کا
غالب

سو واری
وٹ عشق دی ٹٹی
دل ویری
مڑ مڑ ایسے پاسے جاندا

13

آئینہ دیکھ‘ اپنا سا منہ لے رہ گیے
صاحب کو‘ دل نہ دینے پہ‘ کتنا غرور تھا
غالب

کہندا سی
اسیں دل نئیں دینا
شیشے بھرم سارا
چور چور کیتا

14

ریختے کے تمھیں استاد نہیں ہو‘ غالب
کہتے ہیں‘ اگلے زمانے میں کوئ میر بھی تھا
غالب

غالبا ریختہ دا
توں ایں گرو نئیں
سنیا اے
اگلے وقتاں وچ
کوئ میر وی ہندا سی

15

پکڑے جاتے ہیں فرشتوں کے لکھے پر ناحق
آدمی کوئ ہمارا‘ دم تحریر بھی تھا
غالب

فرشتیاں دیاں لکھتاں اتے
پھڑے جانے آں
ساڈے ولوں وی
کوئی نسان گواہ ہندا
تاں کرن والی
گل وی سی

16

عشرت قطرہ ہے‘ دریا میں فنا ہو جانا
درد کا حد سے گزرنا ہے دوا ہو جانا
غالب

باہر اک تونبا
دریا وچ ڈیگے‘ تاں موجاں
حداں وچ پیڑ
حدوں باہر‘ پیڑ دا دارو

17

کام اس سے آ پڑا ہے کہ جس کا جہان میں
لیوے نہ کوئ نام‘ ستم گر کہے بغیر
غالب

کم اوہدے نال آ پیا اے
جہنوں سارا جگ
کہاپا آکھے

18

چھوڑوں گا میں نہ اس بت کافر کا پوجنا
چھوڑے نہ خلق‘ گو مجھے کافر کہے بغیر
غالب

اوس بت کافر دی پوجا کر دا راں گا
لوکیں بھانویں‘ کافر کافر آکھ دے رہن

19

دام ہر موج میں ہے حلقہءصد کام نہنگ
دیکھیں کیا گزرے ہے‘ قطرے پہ گہر ہونے تک

اچا ناں کسراں ہویا
سیپی اندر جاندی
بوندرکولوں پچھو
سچا موتی بندیاں بندیاں
اوس تے کیہ ویتی
غالب

20

ہم نے مانا کہ تغافل نہ کرو گے لیکن
خاک ہو جائیں گے ہم‘ تم کو خبر ہونے تک
غالب

منیا‘ٹہل نہ کر سیں
جد تیک تینوں پتہ لگسی
میں مٹی ملساں

21

بنا کر فقیروں کا ہم بھیں غالب
تماشائے اہل کرم دیکھتے ہیں
غالب

منگتے دا ویس وٹا کے
غالب ویکھن ٹریا
سخیاں دیاں کرتوتاں

22

ان کے دیکھے سے جو آ جاتی ہے منہ پہ رونق
وہ سمجھتے ہیں کہ بیمار کا حال اچھا ہے
غالب

اوہنوں ویکھیاں کھڑ پیناں آں
اوہ کیہ جانے وچوں مر مکیا آں

23

حد چاہیے سزا میں عقوبت کے واسطے
آخر گناہ گار ہوں‘ کافر نہیں ہوں میں
غالب


کتے تاں مکن
بجلیاں قہر دیاں
کوئ حد ہوندی اے
کافر کیوں سمجھنا ایں
میں کلمہ گو ہاں

24

جہاں تیرا نقش قدم دیکھتے ہیں
خیاباں خیاباں ارم دیکھتے ہیں
غالب

جھتے جھتے تیرے پیر لگے
اوتھے اوتھے
شداد دیاں جنتاں دسن

25

فکر دنیا میں سر کھیاتا ہوں
میں کہاں اور یہ وبال کہاں
غالب

دنیاں دے جھنجٹاں وچ
سر تنیا اے
میں تاں ایس گڈ دابلد نئیں

26

تھی وہ اک شخص کے تصور سے
اب وہ رعنائی خیال کہاں
غالب

اوہدے نال ساریاں کھیڈاں سن
ہن سوچاں وچ
اوہ ناز تے نخرہ کیتھوں

27

بسکہ مشکل ہے ہر کام کا آساں ہونا
آدمی کو بھی میسر نئیں انساں ہونا
غالب

سوکھے توں سوکھا
کم وی نئیں سوکھا
بندہ‘ بندے دا پتر بنے
ایڈی سوکھی تاں ایہ گل نئیں

28

یہ نہ تھی ہماری قسمت کہ وصال یار ہوتا
اگر اور جیتے رہتے‘ یہی انتظار ہوتا
غالب

ملاقات
ساڈی قسمت وچ
کد لکھی سی
ہور وی‘ جے عمر ملدی
کٹ جاندی اوہ وی
یار دا انتظار کر دیاں

29

قطرے میں دجلہ دکھائ نہ دے اور جز میں کل
کھیل لڑکوں کا ہوا‘ دیدہء بینا نہ ہوا
غالب

تونبے وچ دریا
اک نقطے وچ مضمون سارا
جے نہ بند ہووے
دانائی نئیں
اوہ بالاں دی کھیڈ اے

30

دیکھیے لاتی ہے اس شوخ کی نخوت کیا رنگ
اس کی ہر بات پہ ہم ‘نام خدا‘ کہتے ہیں
غالب

ویکھؤ
اوس شوخے نوں
تکبر کیتھے اپڑاندا
جندی ہر شوخی تے
توبہ توبہ کر دے آں

31

جمع کرتے ہو کیوں رقیبوں کو
اک تماشا ہوا‘ گلہ نہ ہوا
غالب

کیوں کٹھا پیا کرناں ایں
ساڈے ویریاں نوں
گلہ کرناں ایں
کہ تماشا پیا کرناں ایں

32

یہ مسائل تصوف‘ یہ ترا بیان غالب
تجھے ہم ولی سمجھتے‘ جو نہ بادہ خوار ہوتا
غالب

تصوف دے مسلے
اتوں غالب دے منہ چوں‘ واہ
گھٹ نہ لاندا ہوندا
قسمے اوہ ولی ہوندا

33

حضرت ناصح گر آئیں‘ دیدہ و دل فرش راہ
کوئی مجھ کو یہ تو سمجھا دو‘ کہ سمجھائیں گے کیا
غالب

سمجھاوا آوے
جی بسم الله‘ سر متھے تے
مینوں ایہ تاں دسو
سمجھاوے گا کیہ

34

ڈھانپا کفن نے داغ عیوب برہنگی
میں ورنہ ہر لباس میں ننگ وجود تھا
غالب

ایہ ودھا کپھن دا اے
اوس ڈھکیا عیباں نوں
نئیں تاں ہر بانا
دس دیندا سی
میرے عیب سارے

35

عشق سے طبعت نے‘ زیست کا مزا پایا
درد کی دوا پائی‘ درد بے دوا پایا
غالب

عشق
جیون دا سواد دتا
ایہ کل مرضاں دا دارو
اپوں درد ایجا
جہدا دارو نئیں لبھدا
ایس جہان اندر

36

شور پند ناصح نے‘ زخم پر نمک چھڑکا
آپ ہی سے کوئی پوچھے‘ تم نے کیا مزا پایا
غالب

سمجھاوے دی باں باں نے
سگوں پھٹاں تے لون سٹیا
اینوں پچھو
سانوں تڑپا کے
پھلا تینوں کیہ لبھیا اے

37

یہ نعش بےکفن‘ اسد خستہ جاں کی ہے
حق مغفرت کرے‘ عجب آزاد مرد تھا
غالب

بنا کپھن پئی اے
وچارے اسد دی لاش
الله بخشے
بندہ بڑا کھاڑکو سی

38

اس کی امت میں ہوں میں‘ میرے رہیں کیوں کام بند
واسطے جس شہ کے غالب‘ گنبد بے در کھلا
غالب

غالبا میرا کوئی کم
کیویں رک سکدا اے
میں اوہدی امت چوں آں
جیدے لئی‘ تاں جہان دے
سارے راہ کھلے

شہ کو شہ‘ اس لیے نہیں لیا‘ کہ میں حضور کو بادشاہ نہیں‘ نبی سمجھتا ہوں۔

39

کی مرے قتل کے بعد‘ اس نے جفا سے توبہ
ہائے! اس ذود پشیماں کا پشیماں ہونا
غالب

جانوں مار کے توبہ پیا کر دا اے
بڑی گل اے جی
ہن نئیں توڑ دا اوہ عاشقاں دے دل

40

خانہ زاد زلف ہیں‘ زنجیر سے بھاگیں گے کیوں
ہیں گرفتار وفا‘ زنداں سے گھبراویں گے کیا
غالب

رن مرید اے‘ گھبرا ناں
سنگل نئیں توڑ دا
وفا وچ بجیاں لئی
جیلاں کیہ نئیں

41

غالب! ترا احوال سناویں گےہم ان کو
وہ سن کے بلا لیں‘ یہ اجارا نہیں کرتے
غالب

میاں غالبا
تیرا وی دساں گے
تیرا حال سن کے
تینوں بلا لین
ایہ دعوی نئیں کر دے

42

ہم کو ان سے ہے وفا کی امید
جو نہیں جانتے‘ وفا کیا ہے
غالب

اونہاں توں؟
جہڑے جاندے نئیں
خیر کیہ اے
خیر دی آس لائی بیٹھے آں

43

کعبے کس منہ سے جاؤ گے غالب
شرم تم کو مگر نہیں آتی
غالب

کعبے کیڑے منہ نال جاویں
کعبے دا ناں لیندیاں
تینوں شرم نئیں آندی

44

میں نے مانا کہ کچھ نہیں غالب
مفت ہاتھ آئے تو برا کیا ہے
غالب

منیا
غالب کچھ نئیں
مفتی لبھے تاں
ایدے وچ کیہ حرج اے

45

لازم نئیں کہ خضر کی ہم پیروی کریں
جانا کہ اک بزرگ ہمیں ہم سفر ملے
غالب

ضروری نئیں
خضر دے پچھے لگیے
ٹھیک اے
راہ چ اک بڈھا ملیا سی

46

بار ہا دیکھی ہیں ان کی رنجشیں
پر کچھ اب کے سرگرانی اور ہے
غالب

چشم قاتل تھی میری دشمن ہمیشہ لیکن
جیسی اب ہو گئی قاتل کبھی ایسی تو نہ تھی
ظفر

اوہناں دا موڈ خراب ہوندا
کئی وری ویکھیا اے
پر ایتکیں تاں
دوہائی ہوئی پئی اے

47

دیکھنا تقریر کی لذت کہ جو اس نے کہا
میں یہ جانا کہ‘ گویا یہ بھی میرے دل میں ہے
غالب

سوادی گل تاں اوہو ہوندی
جہڑی آودے دل دی جاپے

48

بے صرفہ ہی گزرتی ہے‘ ہو گرچہ عمر خضر
حضرت بھی کہیں گے ہم کیا کیا کیے
غالب

عمر کنی وی لمی ہووے
ایویں ای لنگ ٹپ جاندی اے
بعدوں اوہ وی
لمیاں لمیاں چھڈ سن

49

خاک میں ناموس پیمان محبت مل گئے
اٹھ گیے دنیا سے راہ و رسم یاری ہائے ہائے
غالب

بولاں دا پالن مٹی ملیا اے
دنیا وچ‘ سجناں دی سجائی
ہن کد لبھدی اے

50

آگ سے پانی میں بجھتے وقت اٹھتی ہے صدا
ہر کوئی درماندگی میں نالے سے ناچار ہوتا ہے
غالب

پانی دا اک تونبہ وی
اگ دی باں کرا دیندا اے
مندے حالاں وچ
سارے ای
واتاویاں مار دے نے

51

ہیں اور بھی دنیا میں سخنور بہت اچھے
کہتے ہیں کہ غالب کا ہے انداز بیاں اور
غالب

دنیا وچ
ود سوود شاعر پئے
سننے آں
غالب دی گل ای ہور اے

52

وارستہ اس سے ہیں کہ محبت ہی کیوں نہ ہو
کیجے ہمارے ساتھ‘ عداوت ہی کیوں نہ ہو
غالب

ایہ کل پلے بنی اے
دشمنی ہووے یاں متری
یاداں وچ رکھ دی اے

53

زندگی جب اپنی اس شکل سے گزری‘ غالب
ہم بھی کیا یاد کریں گے کہ خدا رکھتے تھے
غالب

کھسماں آلے ہو کے
یہاتی کجھ ایداں لنگی
یاد ای کراں گے
غالب

54

ظاہر ہے کہ گھبرا کے نہ بھاگیں گے نکیرین
ہاں‘ منہ سے مگر باہءدوشنبہ کی بو آئے
غالب

بو سنگدیاں ای
دونویں نٹھ پجھ جان گے
پہلے توڑ دی پی کے
اسیں قوریں ڈیرے لاءے نے

55

فلک کو دیکھ کے کرتا ہوں اس کو یاد اسد
جفا میں اس کی ہے انداز کارفرمائی کا
غالب

سمان نوں ویکھ کے
یاد اونہدی آ جاندی اے
دونویں اکو جئے نے
آفتاں ڈھاون وچ

56

ہیں آج کیوں ذلیل کہ کل تک نہ تھی پسند
گستاخی فرشتہ ہماری جناب میں
غالب

فرشتے
سجدے توں ناں کیتی
دھکے مار
درباروں باہر کیتا
ویکھ کے سانوں
چتھراں دی چھاں تھلے
خورے چپ کیوں وٹی بیٹھا

57

ظلمت کدے میں مرے شب غم کا جوش ہے
اک شمع ہے دلیل سحر‘ سو خموش ہے
غالب

میری نھیر کوٹھری وچ
غماں نیں ہنھیر مچایا اے
اک دیوا سی
چانن دا گواہ بنیا
اوہ وی
اکھاں توں محروم ہویا

58

آتے ہیں غیب سے یہ مضامین خیال میں
غالب صریر خامہ نوائے سروش ہے
غالب

شعراں دے مضمون سارے
اتوں لہندے نے
میرے قلم دی چیک
جبریل دی واز اے

59

دونوں جہان دے کے‘ وہ سمجھے‘ یہ خوش رہا
یاں پڑی یہ شرم کہ تکرار کیا کریں
غالب

دو جہاناں دی کنجی پھڑا کے
اوہ سمجھیا
راضی ہو گیا ہوسی
ایدھر مروت
جب دا بوہا پھڑ کھلوتی
غالب

60

یہ کہاں کی دوستی ہے کہ بنے ہیں دوست ناصح
کوئی چارہ ساز ہوتا کوئی غم گسار ہوتا
غالب

میتری تاں ویکھو
نصیحتاں کر دے نے
عشق دے پھٹاں تے
مٹھے بولاں دا مرہم
رکھ دے نئیں

61

کاو کاو سخت جانی ہائے تنہائی نہ پوچھ
صبح کرنا شام کا‘ لانا ہے جوئے شیر کا
غالب

اکلاپے دا دکھ ناں پچھو
رات پہاڑوں‘ ددھ دی نہر
کڈیاں لنگدی اے

62

گرچہ ہوں دیوانہ‘ پر کیوں دوست کا کھاؤں فریب
آستین میں دشنہ پنہاں‘ ہاتھ میں نشتر کھلا
غالب

میتر دے ہتھ چھرا
کچھ وچ تیسا ویکھ کے
شیدائی آں‘ ایہ پر
کیوں وسا کھاواں
اثاراں دا میں جانو آں

63

ایک ہنگامے پہ موقوف ہے گھر کی رونق
نوحہءغم ہی سہی‘ نغمہءشادی نہ سہی
غالب

گھر
رولے رپے نال ای پہبے
پہانویں اوہ رونا دھونا ہووے
خوشیاں نئیں‘ تے ناسہی

64

آتش دوزخ میں یہ گرمی کہاں
سوز غم ہائے نہانی اور ہے
غالب

اوہ سیکا
دوزخ دی اگ وچ کیتھوں
جہڑا لکیا ہووے
دکھ درد دی بکل اندر

65

قاصد کو اپنے ہاتھ سے گردن نہ ماریے
اس کی خطا نہیں ہے یہ قصور میرا تھا
غالب

ایدھی دھون تے ہتھ نہ رکھ
قصور وند تاں اسیں آں
ایدھے ہتھ‘اساں کیوں خط گہلیا سی
 

Rate it:
31 Jul, 2014

More Sahir Ludhianvi Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: maqsood hasni
Visit 273 Other Poetries by maqsood hasni »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

The kalam of Sahir Ludhianvi on Taj Mehal is very famous which I also read with the help of this site. The words which he choose in this poetry to express his feelings make this poetry more lovely.

By: Ghous, peshawar on Jan, 19 2017

I am eager to read poetry who looks like a story and in majority Sahir Ludhianvi write a long poetry long time ago i read his poetry with full of joy and follow him or his poetry on this

By: Hammad, Karachi on Jul, 12 2016

All the poetries by Sahir Ludhyanvi based on ghazals which is full of romance, specially the words which he use is easy to understand, actually I also like ghazals in the poetry.

By: imran, khi on Dec, 28 2015

All the sharing of Sahir Ludhyanvi in this site are different in the topics in which some ghazals are also include which I read, I feel the feelings of the poetry my self when I read it.

By: ayaz, khi on Oct, 24 2015

I love Sahir Ludhianvi romantic poetry more than other his other poetic work. He is indeed a great poet who did really amazing work to improve Urdu romantic Poetry.

By: Seema, Karachi on Sep, 21 2015

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City