یہی تمنا ہے میری بس

Poet: Bushra babar
By: Bushra Babar, Islamabad

میں مدینے میں جاؤں، یہی تمنا ہے میری بس
پھر لوٹ نہ پاؤں ،یہی تمنا ہے میری بس

حال دل اپنا میں ان کو ہی سناؤں گی
اور وہ سن لیں میری بات کو،یہی تمنا ہے میری بس

غلاموں کی غلام بن کر،میں ان کے در پے جاؤں گی
اس در پہ غلامی قبول ہو،یہی تمنا ہے میری بس

خدایا کچھ تو کر ایسا بلاوا بھی تو آے نا
یہی تمنا ہے میری بس،یہی تمنا ہے میری بس

امید مجھ کو پکی ہے ،بلاوا آ ہی جائے گا
بلاوا آ ہی جائے اب ،یہی تمنا ہے میری بس

روضہ رسول کو نظر دل سے دیکھوں گی
میں اس منظر کو سمیٹوں گی ،یہی تمنا ہے میری بس

Rate it:
28 Apr, 2019

More Religious Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: Bushra Babar
Visit 56 Other Poetries by Bushra Babar »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City