جب سامنے نہ حسرتوں کا آئینہ رہے

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملاشیا

گر چاہتا ہے تو بھی نہ دنیا خفا رہے
بہتر ہے اپنے درمیاں یہ فاصلہ رہے

تصویرِ حسنِ یار کو لے جاؤں کس طرف
جب سامنے نہ حسرتوں کا آئینہ رہے

شکوہ نہیں کہ دنیا میں بدنام ہم ہوئے
ہے ماجرا کہ مر کے بھی تم پر فدا رہے

ہوش و حواس لٹ گئے جن کے سرور میں
افسوس وہ نہ میکدے میں دلربا رہے

تتلی ! تمہارے حسن کو خوشبو کا واسطہ
گلشن میں تیری دید کا منظر سدا رہے

تشنہ خیالِ یار میں مردہ رہی حیات
وشمہ یہ ہم پہ عشق کے الزام کیا رہے

Rate it:
18 Mar, 2019

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: وشمہ خان وشمہ
Visit Other Poetries by وشمہ خان وشمہ »
Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City