ہے کشمکش یہ عجب ان کے سامنے وشمہ

Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

 کھلا کھلا سا وہ ماحول گلستاں سے ہم
تھیں جس کے دم سے بہاریں وہ باغباں سے ہم

چلی ہوائے تشدد اجڑ گیا ہے شہر
کہیں مکیں نہ رہے تو کہیں مکا ں سے ہم

لٹا دیا تھا نشیمن بھی جس چمن کے لئے
اسی چمن میں مرا کوئی نوحہ خواں سے ہم

جھکی ہے خود ہی جبیں جب بھی آئی یاد حبیب
ہمارا سجدہ کبھی ہو تابع اذاں سے ہم

انھیں کے دم سے ہیں تہذیب کے نشاں باقی
وہ قدریں جن کا کوئی آج داستاں سے ہم

ہیں مصلحت کی سیاہی میں ڈوبی تحریریں
ترا قلم بھی حسن تیرا ترجماں سے ہم

ہے کشمکش یہ عجب ان کے سامنے وشمہ
نہ کہہ سکوں نہ انھیں اور یہ جی ہاں سے ہم
 

Rate it:
21 Oct, 2018

More Love / Romantic Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

About the Author: washma khan washma
I am honest loyal.. View More
Visit 4528 Other Poetries by washma khan washma »

Reviews & Comments

Amazing poetry yar.....Abdur Rehman Sarkar......fb b isi name sa ha

By: Abdur Rehman, Peshawer on Oct, 24 2018

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City