غزل بہادر شاہ ظفر کی زمین میں
Poet: Naveed jaffri
By: S.A.Lateef (Naveed Jaffri), Dubai

جو فنا کے بوجھ سے دب گیا میں اسی کا نقش و نگار ہوں
جو مٹا ہے راہ امید میں اسی کارواں کا غبار ہوں

جسے آ سکی نا کبھی ہنسی جسے چھو کے بھی نا گئی خوشی
نہیں باقی جس کا نشان بھی میں مٹا ہوا وہ مزار ہوں

جو نا رو سکا نا تڑپ سکا جو زباں سے اف بھی نا کرسکا
وہ نوید بستا زبان ہوں نا میں چیخ ہوں نا پکار ہوں

Rate it: Views: 609 Post Comments
 PREV More Poetry NEXT 
 More Sad Poetry View all
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 29 May, 2009
About the Author: Syed Abdul Lateef (Naveed Jaffri)

Visit 15 Other Poetries by Syed Abdul Lateef (Naveed Jaffri) »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
جو بھی آوے ھے وہ نزد یک ھی بیٹھے ھے تیرے ھم کھاں تک تیرے پہلو سے سر کتے جا ویں
By: Waseem Ramay, Chichawatni on Dec, 01 2011
Reply Reply to this Comment
very nice and wonderful your poetry is so good it convey thought and provoking idea
By: samia bashir, samandri on Jul, 27 2010
Reply Reply to this Comment
محترم خالد صاحب
اسلام و علیکم میری اس ادنیٰ سی کاوش پر آپ جیسے با علم شخصیت نے اپنی نظر کرم ڈالی میرے لیے یہ بات ہی قابل فخر ہے، میں تو فن سخنوری کا اک ادنا سا طالب علم ہوں آیئندہ بھی اسی طرح آپکے قیمتی مشوروں اور رہنمائی کا منتظر رہوں گا
By: Naveed Jaffri, Dubai-UAE on Feb, 25 2010
Reply Reply to this Comment
محترم جناب نوید جعفری صاحب
آداب و تسلیمات
حضرت بہادر شاہ ظفر کی زمین میں آپ کی غزل دیکھی- ایک اچھی کوشش ہے لیکن ابھی اور محنت جاری رکھیں- اللہ آپ کو مزید بہتری عطا فرمائے- آمین مس
By: Khalid Roomi, Rawalpindi on Nov, 12 2009
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.