خیال و خواب ہوا برگ و بار کا موسم
Poet: Parveen Shakir
By: mehwish, khi

خیال و خواب ہوا برگ و بار کا موسم
بچھڑ گیا تری صورت بہار کا موسم

کئی رتوں سے مرے نیم وا دریچوں میں
ٹھہر گیا ہے ترے انتظار کا موسم

وہ نرم لہجے میں کچھ تو کہے کہ لوٹ آئے
سماعتوں کی زمیں پر پھوار کا موسم

پیام آیا ہے پھر ایک سرو قامت کا
مرے وجود کو کھینچے ہے دار کا موسم

وہ آگ ہے کہ مری پور پور جلتی ہے
مرے بدن کو ملا ہے چنار کا موسم

رفاقتوں کے نئے خواب خوش نما ہیں مگر
گزر چکا ہے ترے اعتبار کا موسم

ہوا چلی تو نئی بارشیں بھی ساتھ آئیں
زمیں کے چہرے پہ آیا نکھار کا موسم

وہ میرا نام لیے جائے اور میں اس کا نام
لہو میں گونج رہا ہے پکار کا موسم

قدم رکھے مری خوشبو کہ گھر کو لوٹ آئے
کوئی بتائے مجھے کوئے یار کا موسم

وہ روز آ کے مجھے اپنا پیار پہنائے
مرا غرور ہے بیلے کے ہار کا موسم

ترے طریق محبت پہ بارہا سوچا
یہ جبر تھا کہ ترے اختیار کا موسم

 

Rate it: Views: 78 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 16 Mar, 2018
About the Author: Owais Mirza

Visit Other Poetries by Owais Mirza »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
The style of writing Ghazal by Parveen Shakir is unique, the Ghazal lovers who read the collection of her never panic to recognized Parveen Shakir Ghazal. On this page, currently I read 'Khayal o Khuwar Hua' is such a lovely ghazal.
By: iffat, khi on Dec, 06 2018
Reply Reply to this Comment
This time find the best Mausam e Bahar Poetry by one of the most favorite Poet Perveen Shakir, she wrote many Ghazalz in which this one is one of the best collection by her.
By: jahangir, khi on Jun, 25 2018
Reply Reply to this Comment
In every poetry of Parveen Shakir the mood of the poet is different. Parveen Shakir was the poet who had an ability to wrote both love and Sad Ghazalz, her Ghazal is still popular in Urdu.
By: veena, khi on Apr, 12 2018
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.