گئے سرخم، گئے پُرنم، گئے فریاد ہوتے ہیں

Poet: ابنِ منیب
By: ابنِ مُنیب, سویڈن

گئے سرخم، گئے پُرنم، گئے فریاد ہوتے ہیں
تمہارے عاشقاں صاحب، بہت برباد ہوتے ہیں

قفس دِکھتا نہیں اُن کا، نہ زنجیریں دِکھیں لیکن
ہو جن پر خوف کا پہرا، وہ کب آزاد ہوتے ہیں؟

اماں مانگیں تَو کس دل سے ہمیں معلوم ہے واعظ!
فلک کے کارخانے میں ستم ایجاد ہوتے ہیں

کوئی بھی کام ہو مشکل، ہمیں آواز دے لینا
تمہارے شہر میں جاناں ہمِیں فرہاد ہوتے ہیں

Rate it:
Views: 61

More Urdu Ghazals Poetry

POPULAR POETRIES

FAMOUS POETS

Email
30 Aug, 2018
About the Author: Ibnay Muneeb
https://www.facebook.com/Ibnay.Muneeb.. View More
Visit 132 Other Poetries by Ibnay Muneeb »

Reviews & Comments

Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City
Language:    

My Page! Account Login:

(Post your Comments Immediately)
Email
Password
Do not have MyPage! account? Create Now

Guest Login:

(Comments will be online after Moderator Review)
Name
Email
City