بس یوں ہی اک وہم سا ہے واقعہ ایسا نہیں
Poet: Anwar Masood
By: sadia, bhwp

بس یوں ہی اک وہم سا ہے واقعہ ایسا نہیں
آئنے کی بات سچی ہے کہ میں تنہا نہیں

بیٹھیے پیڑوں کی اترن کا الاؤ تاپئے
برگ سوزاں کے سوا درویش کچھ رکھتا نہیں

اف چٹخنے کی صدا سے کس قدر ڈرتا ہوں میں
کتنی باتیں ہیں کہ دانستہ جنہیں سوچا نہیں

اپنی اپنی سب کی آنکھیں اپنی اپنی خواہشیں
کس نظر میں جانے کیا جچتا ہے کیا جچتا نہیں

چین کا دشمن ہوا اک مسئلہ میری طرف
اس نے کل دیکھا تھا کیوں اور آج کیوں دیکھا نہیں

اب جہاں لے جائے مجھ کو جلتی بجھتی آرزو
میں بھی اس جگنو کا پیچھا چھوڑنے والا نہیں

کیسی کیسی پرسشیں انورؔ رلاتی ہیں مجھے
کھیتیوں سے کیا کہوں میں ابر کیوں برسا نہیں

Rate it: Views: 69 Post Comments
 PREV More Poetry NEXT 
 More Anwar Masood Poetry View all
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 03 Sep, 2018
About the Author: Owais Mirza

Visit Other Poetries by Owais Mirza »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
Anwar Masood's have various collection of Ghazalz, the way he write Love Ghazal is totally unique. This 'Bus yun Hi Ek Wehm Sa Hai Waqia Aesa Nahi' identifies that in this poetry the poet was in full of romantic mood.
By: owais, hyderabad on Jan, 07 2019
Reply Reply to this Comment
Little bit the shade of comedy is appears in the poetry by Anwar Masood, I have many collections of his poetry in which I recently read 'Bus Yun Hi Ek Wehem'. The poet have brilliant ability to convey his message.
By: ayesha, khi on Dec, 17 2018
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.