ڈوبنے کا کیا کروں شکوہ ہوا
Poet: وشمہ خان وشمہ
By: وشمہ خان وشمہ, ملایشیا

ڈوبنے کا کیا کروں شکوہ ہوا
تیرے دل کی قید میں رہنا ہوا

زندگی کے لق و دق صحرا میں پھر
چھوڑو پھر کیوں کربلا زندہ ہوا

میں نے مانا آپ ہیں سچ کے سفیر
جو بھی کرتے ہو یہی مسئلہ ہوا.

آپ کی سوچوں پہ ہے کس کی گرفت
کس کو مطلب ہے کہ کیا جرگہ ہوا

یہ حقیقت ہے خفا مجھ سے ہو تم
یہ بھی تو سچ ہے وفا پیدا ہوا

کیوں نہیں پہنچی فلک تک آج بھی
جب کہ دل سے ہر دعا ڈوبا ہوا

یہ تو وشمہ کو یقیں ہے ہر گھڑی
پیار تو دل سے سدا کرتا ہوا

Rate it: Views: 0 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 12 Sep, 2018
About the Author: washma khan washma

I am honest loyal.. View More

Visit 4456 Other Poetries by washma khan washma »
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.