محاذِ جنگ سے ایک سپاہی کا بیوی کا نام خط
Poet: Wasim Ahmad Moghal
By: Wasim Ahmad Moghal, lahore

ہے شہادت کی بس آرزو جانِ من
آؤ مل کر کریں جستجو جانِ من

اُس کی خاطر ہوں جنگل میں بیٹھا ہوا
چھوڑ آیا ہو سب کاخ و کُو جانِ من

نور ہی نور گھیرے ہوئے ہے مجھے
رقص میں ہیں یہاں رنگ و بُو جانِ من

میری آنکھوں میں تیری ہی تصویر ہے
اور دل میں ہے بس تُو ہی تُو جانِ من

چاند نکلا ہوا ہے عجب شان سے
تم سے ملتا ہے وہ ہو بہو جانِ من

میں پلٹ جاؤں اب یہ تو ممکن نہیں
مجھ کو آتی ہے جنّت کی بُو جانِ من

ان مشاکل کا حل بھی نکل آئے گا
بیٹھ کر کچھ کریں گفتگو جانِ من

جب بھی چاہے گا ہم کو وہ لے جائے گا
ہم کو کرنی ہے بس جستجو جانِ من

چاہتا ہوں کہ مر جاؤں حق کے لئے
جانے کب یہ کٹے گا گلو جانِ من

میرے چہرے پہ بہتا لہو دیکھ کر
کہہ نہ دے گا مجھے سرخرو جانِ من

ساتھ رہنا مرے ہے یہ ہی التجا
چھوڑ کر مجھ کو جانا نہ تُو جانِ من

تم ہی دینا مجھے حوصلہ اُس سمے
رب سے باتیں ہوں جب دوبدُو جانِ من

میرے آقا کو ہے جو بہت ہی عزیز
ہے شہیدوں ہی کا وہ لہو جانِ من

دیکھنا جب بھی پہنچے گے جنّت میں ہم
گیت گائیں گے سب خوش گلو جانِ من

میرے چہرے کے سب داغ مٹ جائیں گے
پھر سے کر دے گا وہ خوبرو جانِ من

مر نہ جاؤں گا کیا میں خوشی سے وہاں
وہ بلائے گا جب روبرو جانِ من

Rate it: Views: 1 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 09 Oct, 2018
About the Author: Wasim Ahmad Moghal

Visit Other Poetries by Wasim Ahmad Moghal »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.