دامن میں آنسوؤں کا ذخیرہ نہ کر ابھی
Poet:
By: Shahid Hasrat, Multan

دامن میں آنسوؤں کا ذخیرہ نہ کر ابھی
یہ صبر کا مقام ہے گریہ نہ کر ابھی

جس کی سخاوتوں کی زمانے میں دھوم ہے
وہ ہاتھ سو گیا ہے تقاضا نہ کر ابھی

نظریں جلا کے دیکھ مناظر کی آگ میں
اسرار کائنات سے پردا نہ کر ابھی

یہ خامشی کا زہر نسوں میں اتر نہ جائے
آواز کی شکست گوارا نہ کر ابھی

دنیا پہ اپنے علم کی پرچھائیاں نہ ڈال
اے روشنی فروش اندھیرا نہ کر ابھی

Rate it: Views: 2 Post Comments
 PREV All Poetry NEXT 
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 11 Oct, 2018
About the Author: Shahid Hasrat

Visit 112 Other Poetries by Shahid Hasrat »

Currently, no details found about the poet. If you are the poet, Please update or create your Profile here >>
 Reviews & Comments
This is good Gazal of famous poet Saqi Farooqi( Late)
By: Sajjad Hussain , Fateh Darya on Oct, 15 2018
Reply Reply to this Comment
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.