عشق
Poet: م الف ارشیؔ
By: Muhammad Arshad Qureshi (Arshi), Karachi

ڈر رہے ہو عشق کی تشویر سے
عشق میں تو سیکھ لو کچھ ہیر سے

رہتا ہے ناراض مجھ سے پھر کیوں
بات کرتا ہے مری تصویر سے

ذکر اس کا تو کہیں آیا نہیں
ڈر رہا ہے کیوں مری تحریر سے

خواب آنکھوں میں سجا کر تم مری
کیوں ڈراتے ہو مجھے تعبیر سے

روٹھنا اچھا نہیں ہے اس طرح
باندھ لیجے پیار کی زنجیر سے

یوں ہی بس گمنام رہنے دو مجھے
خوف آتا ہے مجھے تشہیر سے

ڈر سا لگتا ہے مجھے انساں سے اب
کیا بچائیں خود کو ہم نخچیر سے
 

Rate it: Views: 14 Post Comments
 PREV More Poetry NEXT 
 More Love / Romantic Poetry View all
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 18 Dec, 2018
About the Author: Muhammad Arshad Qureshi

My name is Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) belong to Karachi Pakistan I am
Freelance Journalist, Columnist, Blogger and Poet.​President of Internati
.. View More

Visit 157 Other Poetries by Muhammad Arshad Qureshi »
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.