محال
Poet: م الف ارشیؔ
By: Muhammad Arshad Qureshi (Arshi), Karachi

اس حال میں جیا ہوں کہ جینا محال ہو
جب آبرو کی بات انا کا سوال ہو

حسرت رہی کہ وہ چلا آئے گا ایک دن
جب بھی بس اس کی بات ہو اس کا خیال ہو

اک عہد یہ بھی تھا کہ محبت نبھائیں گے
چاہے عروج ہو یا کبھی پھر زوال ہو

ظالم کا ایک بھی نشاں باقی رہا جہاں
دنیا میں ایک بھی کوئی ایسی مثال ہو

ظاہر ہو جیسا ایسا ہی اندر سے بھی تو ہو
ایسا کوئی جہاں میں بھی حسن و جمال ہو

ملتے ہوئے کہا تھا کہ بس یاد یہ رہے
بچھڑیں بھی اس ادا سے نہ کوئی ملال ہو

جانے کہاں کا مجھ کو یہ رستہ دکھا دیا
اک خار بھی ہٹائے یہ کس کی مجال ہو
 

Rate it: Views: 16 Post Comments
 PREV More Poetry NEXT 
 More General Poetry View all
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 18 Dec, 2018
About the Author: Muhammad Arshad Qureshi

My name is Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) belong to Karachi Pakistan I am
Freelance Journalist, Columnist, Blogger and Poet.​President of Internati
.. View More

Visit 157 Other Poetries by Muhammad Arshad Qureshi »
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.