اشارے
Poet: م الف ارشیؔ
By: Muhammad Arshad Qureshi (Arshi), Karachi

جو سمجھے نہیں تھے اشارے ہمارے
وہی عشق کے ہیں خسارے ہمارے

جئیں بھی تو آخر یوں کس کے سہارے
سبھی چھن چکے ہیں سہارے ہمارے

بھٹکتی رہی ہیں کئی ناؤ ہم میں
کوئی بھی نہیں ہیں کنارے ہمارے

مرے پاس پھر تم چلے آؤ گے نا
سمجھ لو گے جب تم اشارے ہمارے

مرے زخموں کو کل کریدا تھا جس نے
وہ کہتے ہیں اب تم ہو پیارے ہمارے

نہ جانے وہ سب بھی کہاں کھو گئے ہیں
مقدر کے ہیں جو ستارے ہمارے

دسمبر کی ان سرد شاموں میں ملنا
تمہیں یاد ہیں وہ شرارے ہمارے
 

Rate it: Views: 13 Post Comments
 PREV More Poetry NEXT 
 More General Poetry View all
 Famous Poets View more
Email
Print Article Print 03 Jan, 2019
About the Author: Muhammad Arshad Qureshi

My name is Muhammad Arshad Qureshi (Arshi) belong to Karachi Pakistan I am
Freelance Journalist, Columnist, Blogger and Poet.​President of Internati
.. View More

Visit 157 Other Poetries by Muhammad Arshad Qureshi »
 Reviews & Comments
Post your Comments Language:    
Type your Comments / Review in the space below.